اسلام آباد (زمونگ سوات آن لائن نیوز)1970 سے اب تک ہونے والی لاتعداد تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ وسیع حلقہ احباب رکھنے والے افراد تنہا لوگوں کے مقابلے میں زیادہ مسرور رہتے ہیں اور زیادہ عمر پاتے ہیں۔ دوستوں کا حلقہ بہتر دماغی اور نفسیاتی صحت کی علامت ہوتا ہے لیکن ایک نئی تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ فیس بک جیسا سوشل نیٹ ورک بھی مفید ہوتا ہے اور عمر بڑھاتا ہے بشرطیکہ اسے درست انداز میں استعمال کیا جائے۔
1970 سے اب تک ہونے والی لاتعداد تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ وسیع حلقہ احباب رکھنے والے افراد تنہا لوگوں کے مقابلے میں زیادہ مسرور رہتے ہیں اور زیادہ عمر پاتے ہیں۔ 9 سال تک ہونے والی ایک تحقیق سے انکشاف ہوا ہے کہ تنہا افراد میں وقت سے پہلے موت کا خدشہ 2.8 گنا زیادہ ہوتا ہے۔یونیورسٹی آف کیلیفورنیا سان ڈیاگو کے ماہرین ولیم ہوبز ار جیمز فولر کے مطابق ایک کروڑ بیس لاکھ افراد پر کئے گئے سروے کے بعد سامنے آیا ہے کہ فیس بک سماجی رابطے برقرار رکھنے میں مددگار ہوتی ہے اور اس کا زندگی اور عمر پر اثر پڑتا ہے۔اس مطالعے کے نتائج نیشنل اکیڈمی آف سائنس کی پروسیڈنگز میں شائع ہوئے ہیں اور اس میں محکمہ صحت کے ریکارڈ سے موازنہ بھی کیا گیا ہے۔ اس مطالعے میں 1945 سے 1989 کے درمیان پیدا ہونے والے افراد کا 6 ماہ تک مطالعہ کیا گیا ۔ اس میں مرنے والے افراد کو بھی نوٹ کیا گیا ہے۔اس مطالعے سے انکشاف ہوا ہے کہ جو لوگ فیس بک استعمال نہیں کرتے ان میں قبل ازوقت موت کی شرح 12 فیصد تک ہوسکتی ہے۔ اس طرح جو لوگ فیس بک پر وقت گزارتے ہیں ان کا موڈ اور صحت بھی بہتر رہتی ہے۔اس تحقیق میں دوستوں کی تعداد تصاویر، اسٹیٹس اپ ڈیٹس، وال پوسٹس اور پیغامات کو بھی نوٹ کیا گیا ہے۔ تصاویر دیکھنے کو فیس ٹو فیس (بالمشافہ) ملاقات کے برابر قرار دیا گیا ۔ ماہرین کہتے ہیں کہ آن لائن اظہار اور دوستوں سے تبادلہ خیال طویل عمر کے لئے بہت ضروری ہوتا ہے۔ماہرین کے مطابق اگرچہ دور ہی سے سہی فیس بک دوست آپ کی خوشی اور غم دونوں پر اپنے مثبت ردِ عمل کا اظہار کرتے رہتے ہیں اور یہ آپ کی زندگی پر مثبت اثر ڈالتا ہے۔




ایک تبصرہ شامل کریں…
0 Likes
435 مناظر