عبدالستار ایدھی بھیک مانگ کر ناجائز بچے پالتا رہا، اس کے جنازے میں اعلیٰ شخصیات کی شرکت اور سلیوٹ ممتاز قادری کا طلسم توڑنے کیلئے کیا گیا، خادم رضوی کے بیان نے ہلچل مچا دی




اسلام آباد(زمونگ سوات ڈاٹ کام)تحریک لبیک یا رسول اللہ کے قائد خادم رضوی کا ایک بیان سامنے آیا جس میں انہوں نے عبدالستار ایدھی کے جنازے میں اعلیٰ سول و عسکری شخصیات کی شرکت کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ عبدالستار ایدھی بھیک مانگ کر ناجائز بچے پالتا رہا ، مال روڈ پر ان بچوں کیلئے اس نے پنگھوڑے رکھے ، یہ رونے والی بات ہے کہ وہ پاکستانی معاشرےکو کیا دے کر گیا ہے اور اس کو کس بات کا سلیوٹ مارا گیا ہے۔ میں پوری دنیا سے ایک سوال پوچھتا ہوںاور اس کے ساتھ میرا یہ سوال ان لوگوں سے بھی ہے جو اس کے جنازے کی رونقیں بڑھانے گئے تھے(اس موقع پر خادم رضوی کی زبان سے ان افراد کیلئے گالی بھی دی گئی)اوراخبارات نے اس کیلئے خصوصی ایڈیشن کا اہتمام کیا ، میرا یہ سوال ان سب لوگوں سے ہے کہ عبدالستار ایدھی نے ساری زندگی جھولی اٹھا کر ناجائز بچے پالنے کیلئے بھیک مانگی جبکہ ایک ہزار سال سے بھاٹی چوک میں بابا جی(داتا صاحب)بیٹھ کر کتنی دنیا پال رہے ہیں، جس وقت کوئی بھی جائے وہاں پر اور وہ اندر سے صاف نیت ہو تو سیڑھیاں چڑھتے ہوئے جس چیز کی بھی نیت کرے اس کی مراد پوری ہو جاتی ہے۔ عبدالستار ایدھی نے تو کسی کو ساری زندگی اپنی جیب سے کچھ بھی نہیں کھلایا اور ایک طرف ایک ہزار سال پہلے غزنی سے لاہور آکر مقیم ہونے والے داتا صاحب جن کے دربار پر آج بھی دنیا پل رہی ہے اسے تو کبھی عبدالستار ایدھی کو سلیوٹ مارنے والوں نے سلیوٹ نہیں کیا۔ خادم حسین رضوی کا کہنا تھا کہ عبدالستار ایدھی کو صرف اس لئے اتنی کوریج دی گئ تاکہ ممتاز قادری لوگوں کو بھول جائے۔ اخبارات میں ایدھی سے متعلق مضمون لکھوائے گئے اور ان مضامین کا عنوان ’’محسن انسانیت، مسیحا‘‘رکھا گیا۔ خادم رضوی نے ان تمام مضامین کو بکواس قرار دیتے ہوئے کہا کہپتہ نہیں کیا کیا لکھا جاتا رہا اور پورا میڈیا اور پوری حکومت چلی گئی اس کے جنازے میں اور کہا گیا کہ ممتاز قادری کا وہ جو طلسم اور وہ جادو جو لوگوں کے سروں پر چڑھا ہوا ہے اس کو توڑاجائے۔ عبدالستار ایدھی کے جنازے میں افراد کی تعداد بڑھانے کیلئے سر توڑ کوششیں کی گئیں مگر پانچ صفوں سے زیادہ نماز جنازہ کی صفیں نہیں بن سکیں۔ خادم رضوی کا کہنا تھا کہ جنازہ بڑا ہونےکیلئے روٹی کھلانا بڑی بات نہیںاور میں اس بات پر دلیل یہ دوں گا کہ رہتی دنیا تک محسن انسانیت، مسیحا کہلوانے والے اور پنگھوڑے میں بچے رکھنے والوں کے جنازے بڑے نہیں ہونے والے ، محمد علی باکسر کو بھی دیکھا جائے جو ساری زندگی اپنی خاطر مکے برساتا رہا، جس کی پوری دنیا میں شہرت تھی اور جب وہ مرا تو کیونکہ مکے اپنے لئے مارتا رہا تو 16ہزار افراد بھی اس کےجنازے میں شریک نہیں ہوئے اور دوسری جانب ایک کانسٹیبل جس کے خلاف یہودی بھی ہوں، نصرانی بھی ہوںاپنا میڈیا بھی اس کے خلاف ہو، اپنے لوگ منافق بھی اس کے خلاف ہوں ، دین کا لبادہ اوڑھ کر خلاف بات کرنے والے بھی ہوںاور جمعۃ المبارک پر اس کیلئے دعا بھی نہ کروائیں اور ممتاز قادری دنیا سے چلا جائے، اور موٹر وے بھی بند کر دی جائے، تو وہ لوگ بتائیں کہ پھر ممتاز قادریکے جنازے میں 60لاکھ بندے کون لایا۔انہوں نے اس حوالے سے مزید کیا کہا۔۔ ویڈیو ملاحظہ کریں!




ایک تبصرہ شامل کریں…
0 Likes
101 مناظر