کرش مشین بندش متاثرین سڑکوں پر نکل آئے ، ہزاروں مزدوروں کا احتجاجی مظاہرہ




سوات(زمونگ سوات ڈاٹ کام)کرش مشین بندش متاثرین سڑکوں پر نکل آئے ، ہزاروں مزدوروں کا احتجاجی مظاہرہ ، شدید نعرے بازی ، ڈی سی افس تک احتجاجی مارچ ، دھرنا ، مسئلہ حل کرنے کیلئے 30 نومبر تک ڈیڈ لائن ، بصورت دیگر وزیراعلیٰ ہاؤس اور بنی گالہ کا گھیراؤ کرنے کی دھمکی ، بعدازاں کرش مشین اونرز ایسوسی ایشن کے صدر ملک رحمت علی ، جنرل سیکرٹری حاجی امین خان ، نائب صدر حاجی اقبال حسین اور فنانس سیکرٹری حاجی شیرین زادہ نے دیگر عہدیداروں کے ہمراہ سوات پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہاکہ یہاں کے غریب عوام نے کرش پلانٹس لگا ئے جہاں پر وہ رزق حلا ل کماتے ہیں ان کرش پلانٹس میں پچیس ہزار مزدور،ڈرائیور اوردیگر لوگ بر سر روزگار ہیں جبکہ مالکان نے صوبائی حکومت کی ہدایت کے مطابق تمام کاغذات بنارکھے ہیں جن میں انڈسٹری،لیبر،فارسٹ ،اینوارمینٹلوائلڈلائف اورایری گیشن کی این او سی وغیرہ شامل ہیں جبکہ ساتھ ساتھ سالانہ فیس بھی باقاعدہ گی سے اداکرتے ہیں ،انہوں نے کہاکہ صوبائی حکومت اورسوات کے ایم این اے وایم پی اے نے ظلم کی انتہا کرتے ہوئے کرش پلانٹس کو بند کرکے پچیس ہزارخاندانوں کے منہ سے نوالہ چھیننے کی کوشش کی ،اس وقت کرش پلانٹوں کے مزدور بے روزگار بیٹھے ہیں جس کے سبب ان کے گھروں میں فاقے شروع ہوئے ہیں ،انہوں نے کہاکہ ہمارے ساتھ ہونے والے ظلم پر دیگر سیاسی پارٹیوں کے قائدین نے بھی خاموشی اختیار کررکھی ہے ،انہوں نے کہاکہ صوبائی حکومت کی ناکام پالیسیوں اورممبران اسمبلی کی عدم توجہی کی وجہ سے ہزاروں مزدوروں کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے پڑ چکے ہیں اگر حکومت کرش پلانٹس نہیں کھولتی تو پھر ان ہزاروں مزدوروں کیلئے متبادل انتظام کرے ،انہوں نے کہاکہ ہم آئندہ الیکشن میں ان لوگوں کو منتخب کریں گے جو اس مشکل وقت میں مزدوروں کا ساتھ دیں،انہوں نے کہاکہ جائز حق کیلئے پرامن احتجاج کررہے ہیں اگر ہمارے مزدورں پر کسی قسم کا تشددکیا گیا تو ہمارے ذمہ دار پی ٹی آئی کی حکومت،ممبران اسمبلی اورڈی سی سوات ہوں گے ،آخر میں انہوں نے مسئلہ کے حل کیلئے پاک آرمی سے تعاؤن کی اپیل کی پریس کانفرنس کے بعد مظاہرین نے سوات پریس کلب سے ڈپٹی کمشنر آفس تک احتجاجی مارچ کیا اور ڈی سی کے دفتر کے سامنے احتجاجی دھرنا بھی دیا اور اپنے مطالبات کے حق میں نعرے لگائے ۔




ایک تبصرہ شامل کریں…
0 Likes
55 مناظر