ذہنی امراض زیادہ تر نوجوان میں ہوتے ہیں اور وہ منشیات وغیرہ کی طرف راغب ہوجاتے ہیں ،ڈاکٹر میاں نظام علی




سوات(زمونگ سوات ڈاٹ کام ) سوات میں ذہنی امراض کا عالمی دن منایا گیا ، اس موقع پر ڈاکٹر میاں نظام علی ، ڈاکٹر اشفاق ، ڈاکٹر محمد رحمن ، محمد سلیم اور ارشاد نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج ورلڈ مینٹل ڈے منانے کا مقصد عوام میں ذہنی امراض کے حوالے سے شعور اجاگر کرنا ہے اور دنیا میں جب ذہنی امراض زیادہ ہوگئے تو 1992میں پہلی بار یہ دن منایا گیا اور آج پوری دنیا میں 10 اکتوبر کو یہ دن منایا جاتا ہے ، انہوں نے کہا کہ ذہنی امراض زیادہ تر نوجوان میں ہوتے ہیں اور وہ منشیات وغیرہ کی طرف راغب ہوجاتے ہیں ، جس سے نہ صرف وہ بلکہ انکا پورا خاندان اور انکی تعلیم متاثر ہوجاتی ہے جس سے خراب معاشرہ اور انکا مستقبل بھی تباہ ہو جاتا ہے ، اسلئے اسمیں والدین ان کے اساتذہ اور میڈیا کا کردار اہم ہے ، اس میں انکو اپنا کردار ادا کرنا چاہئیں تور فوری طور پر ذہنی امراض کے داکٹر سے مشورہ کرنا چاہئیں ، انہوں نے کہا کہ جسمانی امراض کے لئے والدین تور فوری طور پر ڈاکٹر حضرات سے رابطہ کرتے ہیں لیکن ذہنی امراض والوں کو ٹکر اکر انہیں نظر انداز کرتے ہیں جو خطرناک ثابت ہوتے ہیں ، انہوں نے کہا کہ اب ذہنی امراض کا علاج نہایت اسان ہو چکا ہے اسلئے والدین فوری طور پر رابطہ کریں ، انہوں نے کہا کہ آج کل خود کشیوں کی شرح جو زیادہ ہوگئی ہے اور موبائل فون کا غلط استعمال بھی اسکی بڑی وجہ ہے جبکہ معاشرے میں نشہ اور گولیوں کا استعمال اور اسلحہ کی با آسانی دستیابی سے نوجوان نسل خود کشیوں کی طرف راغب ہورہے ہیں ، انہوں نے اس سلسلے میں والدین سے توجہ کی اپیل کی ۔




ایک تبصرہ شامل کریں…
0 Likes
97 مناظر